Betting On Who Will Rule the Hearts – بیٹنگ وہی جو دلوں پر راج کرے

Betting On Who Will Rule the Hearts

t20-worldcup-best-players-1

Whether the limited-overs cricket or ODI cricket , is alive without sixes fours .

The importance of the place, the betting stylish but the batsmen ruled the hearts of fans who dominate the ball bowlers are treated with brutality.

Chris Gayle (West Indies) .

chris-gayle

Chris Gayle and Twenty have become inseparable . IPL or any other league be complete without Chris Gayle . Each franchise Chris Gayle wants to see his team because he knows that Chris Gayle is very fair return .

IPL century of just three balls seventeen hundred seventy five sixes and thirteen fours scored a record breaking innings or charming views of Sydney Dhaka and Harare aggressive batting . They forced the commentators to say that Chris Gayle short course cricket is the most aggressive batsman .

Chris Gayle ‘s Stormy betting leagues beyond just trade in international cricket for bowlers who have been nightmares .

Chris Gayle ‘s first innings score of internationals is also unique .

Chris Gayle West Indies Cricket Board several times due to the differences in the headlines , but headlines have lost its significance when they appear in his brilliant batting from the original headline .

Brendon Mccullum ( New Zealand ) .

brendon-mccullum

New Zealand captain Mac kyulm the dictionary for the bowler has written no exception . If they form bowlers era separation frustration increases , but the fans are the best entertainment anyone could hunhyn .
Fans of the first one hundred in the IPL Mac kyulm With another superb innings of an unbeaten run which I still have not forgotten it looks like Mac kyulm hair playing tennis . Thirteen sixes and ten fours in his innings he had pitched .

Mac kyulm it is unique in that most internationals scored 1959 187 Most sixes and 80 fours most of the records of more than two centuries owner .

In the recent test match against India in Mac kyulm score a triple century in Test cricket , which is New Zealand ‘s first triple century .

Finch ( Australia ) .

aaron-finch

Finch Australian batting line- edge betting its smoke among the experienced batsmen have a sense of presence .

Finch began three years ago, his career and other internationals to score a half-century of the match during the two years he could not leave any particular impression . The turning point of his career came last year when he played against England at Southampton 156 runs in ODI internationals stormy innings which was also the biggest individual score . In this innings he established the record of most sixes fourteen .

Finch -day courier late last year and seven matches after failing Scotland’s bowling attack angry off seven sixes aursulh brilliant 148 runs but then against England Melbourne and Perth in the fifties of the Finch increased confidence .

Finch IPL and Big Bash innings I have played several noteworthy . Australia in the ICC World Twenty Finch is keeping abilities rely on .

David Warner ( Australia ) .

david-warner

helpful to take a big score is .
They date the first Australian batsman who played first-class cricket became part of the Australian cricket team and his first ODI against South Africa in a superb innings of 89 -ball game tntalys throws .

For a time limited overs cricket batsman David Warner hit the mark in Test cricket , but when they were given the chance to prove he has the skills to their fullest .

Recent Test series against South Africa, Warner ‘s six innings of three centuries and two half -centuries in Create centuries in both innings of the Cape Town Test innings included .

Kusal Perera (Sri Lanka) .

kusal-perera

Perera, Sanath Jayasuriya batting Kusal to see is reminiscent of .

Only a year in international cricket skills Perera took many innings the veteran Kara Singapore . Jayawardene and Dilshan ‘s absence has raised his stature wood .

Pereira , who visited Australia last year were included in the Sri Lankan team but they could not manage to score any notable . Return to first-class match he made ​​scores triple century against Bangladesh and ODI in Hambantota and the rapid shift of Clay Play innings .

Clay court match of Twenty five fours and four sixes in his innings of decorated Sixty-four of the Bangladeshi bowlers data and loaded into random . Many fours and sixes against Pakistan bowling Sri Lanka won four runs were scored their cause .

ODI against Bangladesh in Dhaka Pereira after scoring his first Test century against India in the Asia Cup final in fifty and six fours and one six against Pakistan helped Sri Lanka win the fastest forty-two runs encouraged provided .

Yuvraj Singh ( India ) .

yuvraj-singh

Yuvraj Singh’s aggressive batting , depending on their mood . Good mood, bad mood , their bowlers spoils . This thing better than England’s Stuart Broad , who else could understand .

Twenty two thousand and seven in the World Yuvraj Singh broadcast that he had made catastrophe was a picture of helplessness . It was the first time that a batsman in one -over internationals all six balls were sixes .

Yuvraj Singh courier climaxing two thousand eleven World Cup in which they were declared the best player of the tournament , but soon after changed his life when he finds out that he has cancer .’s .

Ahmedabad ODI match against Pakistan in the balls only twenty -seven sixes and four fours , 72 runs were scored .

Shahid Afridi ( Pakistan ) .

shahid-afridi

Shahid Afridi’s aggressive batting instead of consciously acting according to pundits , is his biggest weakness , but that weakness is the fact that the world wants to see quality . Today the quality of most sixes in the history of ODI batsmen who are applying . The quality of the long history of ODI century -makers kept the quickest and turn them into good strike rate seems to be far away from the reach of the other batsmen .

smashing bowlers made ​​their fans will like everything was .

Shahid Afridi batting , bowling and fielding harfan master cricketer who somehow matches in any field can change map .

The first bowler in the ICC World Twenty as they managed to bat in the second World Cricket team in the semi -finals and finals will make Pakistan successfully lofted champion .

Shahid Afridi’s form is coming as well as moving around the captain ‘s but regardless a ‘ team man’ as he always indelibly imprinted its performance .

It is well-known all day that day , said Afridi’s magic srcrh no hraskta team .

بیٹنگ وہی جو دلوں پر راج کرے

محدود اوورز کی کرکٹ چاہے وہ ون ڈے ہو یا ٹی ٹوئنٹی ، چوکے چھکوں کے بغیر بے رونق ہے۔

اسٹائلش بیٹنگ کرنے والوں کی اہمیت اپنی جگہ اہم لیکن شائقین کے دلوں پر وہی بیٹسمین راج کرتے ہیں جو بولرز پر حاوی ہوکر گیند کے ساتھ بے رحمانہ سلوک روا رکھتے ہیں ۔

آئی سی سی ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں بھی چند ایسے بیٹسمین نظر آرہے ہیں جو اپنی جارحانہ بیٹنگ سے میچ کا نقشہ پلٹنے اور دھڑکنوں کو تیز کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

کرس گیل ( ویسٹ انڈیز) ۔
کرس گیل اور ٹی ٹوئنٹی لازم و ملزوم بن چکے ہیں ۔ آئی پی ایل یا کوئی بھی دوسری لیگ کرس گیل کے بغیر مکمل نہیں۔ ہر فرنچائز کرس گیل کو اپنی ٹیم میں دیکھنا چاہتی ہے کیونکہ اسے پتہ ہے کہ کرس گیل کو میلہ لوٹنا خوب آتا ہے۔

آئی پی ایل میں صرف تیس گیندوں پر سنچری مکمل کرتے ہوئے سترہ چھکوں اور تیرہ چوکوں کی مدد سے ایک سو پچھہتر رنز کی ریکارڈ ساز اننگز ہو یا سڈنی ڈھاکہ اور ہرارے میں جارحانہ بیٹنگ کے دلکش نظارے۔ ان سب نے مبصرین کو یہ کہنے پر مجبور کردیا کہ کرس گیل بلاشبہ مختصر دورانیے کی کرکٹ کے سب سے جارح بیٹسمین ہیں۔

کرس گیل کی طوفانی بیٹنگ صرف تجارتی لیگ تک محدود نہیں بلکہ وہ انٹرنیشنل کرکٹ میں بھی باؤلرز کے لیے بھیانک خواب ثابت ہوئے ہیں۔
کرس گیل کو ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل کی اولین سنچری سکور کرنے کا منفرد اعزاز بھی حاصل ہے۔

دو سال قبل ویسٹ انڈیز نے آئی سی سی ورلڈ ٹی ٹوئنٹی جیتا تو اس میں کرس گیل کی جارحانہ بیٹنگ کا دخل نمایاں تھا لیکن شائقین ان کی بیٹنگ سے زیادہ ان کے گینگ نم ڈانس سے لطف اندوز ہوتے رہے ۔

کرس گیل متعدد بار ویسٹ انڈین کرکٹ بورڈ سے اختلافات کے سبب شہ سرخیوں میں رہے ہیں لیکن یہ شہ سرخیاں اس وقت اپنی اہمیت کھو بیٹھتی ہیں جب وہ اپنی شاندار بیٹنگ سے اصل ہیڈلائن میں نظر آتے ہیں۔

برینڈن میک کیولم ( نیوزی لینڈ )۔

نیوزی لینڈ کے کپتان میک کیولم کی لغت میں بھی باؤلر کے لیے کوئی رعایت نہیں لکھی ہے۔ جب وہ فارم میں ہوں تو باؤلرز کی مایوسی بڑھ جاتی ہے لیکن شائقین کے وارے نیارے ہوجاتے ہیں کیونکہ اس سے بہترین تفریح کوئی اور ہونہیں سکتی ۔

شائقین پہلی آئی پی ایل میں میک کیولم کی ایک سو اٹھاون رنز ناٹ آؤٹ کی شاندار اننگز ابھی بھی نہیں بھولے ہیں جس میں ایسا دکھائی دے رہا تھا جیسے میک کیولم ٹینس بال سے کھیل رہے ہوں۔ اس اننگز میں انھوں نے تیرہ چھکے اور دس چوکے لگائے تھے۔

میک کیولم کو یہ منفرد اعزاز حاصل ہے کہ وہ ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میں سب سے زیادہ 1959 رنز سب سے زیادہ 187 چوکے سب سے زیادہ 80 چھکے اور سب سے زیادہ دو سنچریوں کے ریکارڈز کے مالک ہیں۔

حال ہی میں بھارت کے خلاف ٹیسٹ میچ میں میک کیولم نے ٹرپل سنچری بھی سکور کی جو ٹیسٹ کرکٹ میں نیوزی لینڈ کی پہلی ٹرپل سنچری بھی ہے۔

ایرون فنچ ( آسٹریلیا ) ۔

ایرون فنچ آسٹریلوی بیٹنگ لائن اپنی دھواں دھار بیٹنگ سے تجربہ کار بیٹسمینوں کے درمیان اپنی موجودگی کا احساس دلا چکے ہیں۔

ایرون فنچ نے تین سال قبل اپنا ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل کریئر شروع کیا اور دوسرے ہی میچ میں نصف سنچری سکور کی لیکن دو سال کے دوران وہ کوئی خاص تاثر نہ چھوڑ سکے۔ ان کے کریئر کا اہم موڑ اس وقت آیا جب گزشتہ سال انھوں نے انگلینڈ کے خلاف ساؤتھمپٹن میں کھیلے گئے ٹی ٹوئنٹی میں 156 رنز کی طوفانی اننگز کھیل ڈالی جو ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل کا سب سے بڑا انفرادی سکور بھی ہے۔ اس اننگز میں انھوں نے سب سے زیادہ چودہ چھکوں کا ریکارڈ بھی قائم کیا۔

فنچ نے ون ڈے کریر کا آغاز گزشتہ سال کیا اور سات میچوں میں ناکام رہنے کے بعد اسکاٹ لینڈ کے بولنگ اٹیک پر غصہ اتارتے ہوئے سات چھکوں اورسولہ چوکوں کی مدد سے148 رنز بنائے تاہم اس کے بعد انگلینڈ کے خلاف میلبرن اور پرتھ میں سنچریوں نے فنچ کے اعتماد میں اضافہ کردیا۔

فنچ آئی پی ایل اور بگ بیش میں بھی متعدد قابل ذکر اننگز کھیل چکے ہیں۔ آئی سی سی ورلڈ ٹوئنٹی میں آسٹریلوی ٹیم فنچ کی صلاحیتوں پر بھروسہ رکھے ہوئے ہے۔

ڈیوڈ وارنر( آسٹریلیا )۔

ڈیوڈ وارنر کا گرم مزاج ان کی بیٹنگ میں جھلکتا ہے۔گزشتہ سال وہ چیمپئنز ٹرافی کے دوران انگلینڈ کے جو روٹ اور پھر جنوبی افریقہ اے کے کرکٹر کے ساتھ جھگڑے میں ملوث پائے گئے لیکن جہاں تک ان کی بیٹنگ کا تعلق ہے تو وہ آسٹریلوی ٹیم کو بڑے سکور تک لے جانے میں مددگار ثابت ہوئی ہے۔

وہ آسٹریلوی تاریخ کے پہلے بیٹسمین ہیں جو فرسٹ کلاس کرکٹ کھیلے بغیر آسٹریلوی کرکٹ ٹیم کا حصہ بنے اور جنوبی افریقہ کے خلاف اپنے پہلے ہی ٹی ٹوئنٹی میں صرف تنتالیس گیندوں پر 89 رنز کی شاندار اننگز کھیل ڈالی۔
ایک عرصے تک وارنر پر محدود اوورز کی کرکٹ کے بیٹسمین کی چھاپ لگی رہی لیکن جب انھیں ٹیسٹ کرکٹ میں موقع دیا گیا تو انھوں نے اس میں بھی اپنی بھرپور مہارت ثابت کردی۔

جنوبی افریقہ کے خلاف حالیہ ٹیسٹ سیریز کی چھ اننگز میں وارنر نے تین سنچریاں اور دو نصف سنچریاں بنائیں جن میں کیپ ٹاؤن ٹیسٹ اننگز کی دونوں اننگز میں سنچریاں بھی شامل ہیں۔

کوشل پریرا ( سری لنکا )۔

کوشل پریرا کو بیٹنگ کرتا دیکھ کر سنتھ جے سوریا کی یاد تازہ ہوجاتی ہے۔
جے سوریا نے نوے کی دہائی میں ابتدائی اوورز میں بولنگ پر حاوی ہوجانے کی جو روایت ڈالی تھی کوشل پریرا ان ہی کے انداز میں بے خوف بیٹنگ سے اس روایت کو دوبارہ زندہ کرتے دکھائی دے رہے ہیں۔

صرف ایک سال کی بین الاقوامی کرکٹ میں کوشل پریرا نے کئی ایسی اننگز کھیل ڈالی ہیں جس نے تجربہ کار سنگا کارا۔ جے وردھنے اور دلشن کی موجودگی میں ان کے قد کاٹھ کو بڑھا دیا ہے۔

پریرا گزشتہ سال آسٹریلیا کا دورہ کرنے والی سری لنکن ٹیم میں شامل کیے گئے تھے لیکن وہ کوئی قابل ذکر سکور کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکے تھے۔ وطن واپسی پر انھوں نے فرسٹ کلاس میچ میں ٹرپل سنچری سکور کر ڈالی اور پھر بنگلہ دیش کے خلاف ہمبنٹوٹا اور پالی کلے کے ون ڈے میچوں میں دو تیز رفتار اننگز کھیلیں۔

پالی کلے کے ٹی ٹوئنٹی میچ میں بھی ان کی پانچ چوکوں اور چار چھکوں سے سجی چونسٹھ رنز کی اننگز نے بنگلہ دیشی بولرز کے اعداد و شمار کو بے ترتیب اور بھاری بھرکم بنا دیا۔اتنے ہی چوکوں اور چھکوں کی مدد سے پاکستانی بولنگ کے خلاف ان کے بنائے گئے چوراسی رنز سری لنکا کی جیت کا سبب بنے۔

بنگلہ دیش کے خلاف ڈھاکہ کے ون ڈے میں اپنی پہلی سنچری سکور کرنے کے بعد پریرا نے ایشیا کپ میں بھارت کے خلاف نصف سنچری بنائی اور فائنل میں پاکستان کے خلاف چھ چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے تیز رفتار بیالیس رنز بناکر سری لنکا کو جیت کا حوصلہ فراہم کیا۔

یوراج سنگھ ( بھارت )۔

یوراج سنگھ کی جارحانہ بیٹنگ ان کے موڈ پر منحصر ہے ۔ ان کا اچھا موڈ باؤلرز کا مزاج بری طرح خراب کردیتا ہے۔ یہ بات انگلینڈ کے اسٹورٹ براڈ سے زیادہ بہتر اور کون سمجھ سکتا ہے۔

دو ہزار سات کے ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں یوراج سنگھ نے براڈ کی وہ درگت بنائی تھی کہ وہ بے بسی کی تصویر بن گئے تھے۔ وہ پہلا موقع تھا کہ ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میں کسی بیٹسمین نے ایک اوور کی تمام چھ گیندوں پر چھکے لگائے تھے۔

یوراج سنگھ نے اس عالمی مقابلے میں آسٹریلوی بولنگ کے خلاف بھی پانچ چھکوں اور پانچ چوکوں کی مدد سے ستّر رنز سکور کیے تھے جس کے بعد وہ بھارت کی ہر ورلڈ ٹی ٹوئنٹی مہم کا حصہ رہے ۔

یوراج سنگھ کے کریر کا نقطہ عروج دو ہزار گیارہ کا عالمی کپ ہے جس میں وہ ٹورنامنٹ کے بہترین کھلاڑی قرار پائے لیکن فوراً بعد ان کی زندگی ہی بدل گئی جب پتہ چلا کہ وہ کینسر میں مبتلا ہیں۔ اس وقت ان کے لیے کرکٹ کی کوئی اہمیت نہیں رہی تھی لیکن مکمل علاج کے بعد یوراج سنگھ نہ صرف زندگی کے معمولات میں لوٹے بلکہ انھوں نے دوبارہ بیٹ بھی سنبھال لیا اور اسی جارحیت کے ساتھ بولرز کا موڈ خراب کرتے دکھائی دیے جو ان کی خوبی رہی ہے۔

پاکستان کے خلاف احمد آباد کے ٹی ٹوئنٹی میچ میں انھوں نے صرف چھتیس گیندوں پر سات چھکوں اور چار چوکوں کی مدد سے 72 رنز بنائے تھے۔ گزشتہ سال آسٹریلیا کے خلاف راجکوٹ کے ٹی ٹوئنٹی کی اننگز بھی کچھ زیادہ مختلف نہ تھی جس میں انھوں نےصرف پنتیس گیندوں پر پانچ چھکوں اور آٹھ چوکوں کی مدد سے 77 رنز بنائے تھے جو ان کا بہترین انفرادی سکور بھی ہے۔

شاہد آفریدی ( پاکستان )۔
کرکٹ کی عالمی رینکنگ چاہے کچھ بھی کہہ رہی ہو لیکن مقبولیت کی درجہ بندی میں شاہد آفریدی نے روز اول سے آج تک اپنی پوزیشن مستحکم رکھی ہے ۔ان کے پرستاروں کی تعداد کسی بھی دوسرے کرکٹر سے کہیں زیادہ ہے۔

شاہد آفریدی کا بیٹنگ کرتے وقت ہوش کے بجائے جوش سے کام لینا پنڈتوں کے نزدیک ان کی سب سے بڑی کمزوری ہے لیکن یہی کمزوری دراصل وہ خوبی ہے جسے دنیا دیکھنا چاہتی ہے۔ اسی خوبی کے سبب آج وہ ون ڈے کی تاریخ میں سب سے زیادہ چھکے لگانے والے بیٹسمین ہیں۔ اسی خوبی نے انہیں طویل عرصے تک ون ڈے کی تاریخ کا تیز ترین سنچری میکر بنائے رکھا اور اسی خوبی کے نتیجے میں ان کا اسٹرائیک ریٹ دوسرے بیٹسمینوں کی پہنچ سے بہت دور دکھائی دیتا ہے۔

شاہد آفریدی نے کافی عرصے سے خود کو ایک باؤلر قرار دے رکھا ہے لیکن انھیں اس بات کا بھی بخوبی احساس ہے کہ شائقین کو ان کی لیگ اسپن سے زیادہ ان کے بلندوبالا چھکوں سے دلچسپی ہے اور جب ایشیا کپ میں انھوں نے ایشون اور بنگلہ دیشی باؤلرز کی درگت بنائی تو ان کے پرستاروں کو جیسے سب کچھ مل گیا ہو۔

شاہد آفریدی ہرفن مولا کرکٹر ہیں جو بیٹنگ بولنگ اور فیلڈنگ کسی بھی شعبے میں کچھ بھی کرکے میچ کا نقشہ بدل سکتے ہیں۔

پہلے آئی سی سی ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں وہ باؤلر کے روپ میں کامیاب رہے تو دوسرے ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں ان کی بیٹنگ نے سیمی فائنل اور فائنل میں پاکستان کو کامیابی دلاتے ہوئے چیمپین بنوا دیا۔

شاہد آفریدی کی فارم جیسے آتی جاتی رہی ہے اسی طرح کپتانی کا بھی آنا جانا لگا رہا ہے لیکن اس سے قطع نظر ایک’ٹیم مین‘ کی حیثیت سے انھوں نے ہمیشہ اپنی کارکردگی کے انمٹ نقوش چھوڑے ہیں۔

سب کو یہ بات اچھی طرح معلوم ہے جس دن آفریدی کا جادو سرچڑھ کر بولا اس دن پاکستانی ٹیم کو کوئی نہیں ہراسکتا۔

via: bbc urdu

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...

___________________________________________________________________