Vani Case: Girl in Chiniot Pays for Sin of Her Brother

Vani Case: Girl in Chiniot Pays for Sin of Her Brother

chiniot-vani-case

A man Sanaullah married to a girl of her choice secretly in Chiniot. When the news revealed, his sister was asked to pay for the sin of her brother.

Chiniot , panchayat made ​​from Winnipeg girl gang-raped , tied naked with tree

Chiniot : the decision of the panchayat was called Winnipeg girl who was gang-raped in the bare trees were tied .

Surrounding area Mower ovens resident 22 -year-old Sana Ullah son Noor, 20 -year-old Bilquis daughter got last month fled married , Bilquis families panchayat convened , the girl’s father was led by Bhilai bound panchayat area attended I decided that the sister of Mr. Sanaullah Zahid ‘s brother with Bilquis Bibi be Winnipeg , six armed men from the panchayat March Sahib Bibi arms raised and packed house at the tip panchayat Hafiz Zahid Qasim interests are his family moved to Winnipeg , after spending five consecutive days with Zahid Zahid Sahib Bibi divorced and then married her Panchayat decision Noor Ahmad Zahid ‘s uncle filed , the March fifteen of the covenant until March nurahmd living Sahib Bibi March fifteen nurahmd night with his entourage took a mansion .

were tied together by qualified land cleared and pleaded liberated by Bibi Sahib , Sahib Bibi his brothers magistrate ‘s court where her statement and filed a case after the medical was ordered to . sir according to Bibi ‘s family at every opportunity he informed the police but the police action to back underlined anhynblqys instead . The SHO of Police Station Mohammad Obaidullah says Claire suspects will be dealt with according to law .

چنیوٹ؛ پنچایت سے ونی کی گئی لڑکی سے اجتماعی زیادتی، درخت کیساتھ برہنہ باندھ دیا

چنیوٹ: پنچایت کے فیصلے پر ونی قراردی گئی لڑکی سے اجتماعی زیادتی کی گئی جس کے بعد برہنہ حالت میں درخت کے ساتھ باندھ دیا گیا ۔

نواحی علاقہ ماور بھٹیاں کے رہائشی 22 سالہ ثناء اللہ ولد نور نے20سالہ بلقیس دختر ملا سے گزشتہ ماہ بھاگ کر شادی کی تھی، بلقیس کے اہل خانہ نے پنچایت بلائی ،لڑکی کے والد ملا کی سربراہی میں بلائی جانیوالی پنچایت میں علاقہ کی کثیر تعداد نے شرکت کی جس میں فیصلہ کیا گیا کہ ثناء اللہ کی بہن صاحب بی بی کو بلقیس کے بھائی زاہد کے ساتھ ونی کردیا جائے ، پنچایت کے حکم سے چھ مسلح افراد نے یکم مارچ کو صاحب بی بی کو اسلحہ کی نوک پر گھر سے اُٹھایا اور بھری پنچائیت میں حافظ قاسم سے اس کا نکاح پڑھوا کر زاہد کے ساتھ ونی کردیا ،پانچ دن مسلسل زاہد کے ساتھ گزارنے کے بعد زاہد نے صاحب بی بی کو طلاق دے دی اورپھر پنچائتی فیصلے پر اس کا نکاح زاہد کے ماموں نور احمد سے کرادیا ،پانچ مارچ سے پندرہ مارچ تک نوراحمد کی منکوحہ رہنے والی صاحب بی بی کو پندرہ مارچ کے رات نوراحمد اپنے ساتھیوں کے ہمراہ ایک حویلی میں لے گیا ۔

جہاں اسے چار افراد اسے اجتماعی زیادتی کا نشانہ بناتے رہے ، بعدازاں اسے برہنہ حالت میں حویلی کے باہر درخت سے باندھ کراس کے گھر والوں اطلاع دی کہ ہماری لڑکی کو واپس کرو ورنہ اس کے ساتھ اس سے بھی بُرا سلوک کیا جائے گا صاحب کو برہنہ بندھا دیکر اہل دیہہ اکٹھے ہوگئے اور منت سماجت کرکے صاحب بی بی کو آزاد کرایا ،صاحب بی بی کو اس کے بھائیوں نے علاقہ مجسٹریٹ کی عدالت میں پیش کیا جہاں اس کے بیان کے بعد میڈیکل کرانے اور مقدمہ درج کرانے کا حکم دیا گیا ۔صاحب بی بی کے اہل خانہ کے مطابق انہو ںنے ہر موقع پر پولیس کو اطلاع دی لیکن پولیس نے کاروائی کرنے کی بجائے انہیںبلقیس کو واپس کرانے پر زور دیا ۔ تھانہ محمد والا کے ایس ایچ او عبیداللہ کلیار کا کہنا ہے کہ ملزمان کے قانون کے مطابق سخت کارروائی کریں گے ۔

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...

___________________________________________________________________